رسائی کے لنکس

چین کا 40 افریقی ملکوں کو کووڈ ویکسین دینے کا اعلان


چینی کمپنی کی تیار کردہ ویکسین ۔ فائل فوٹو

چین نے کہا ہے کہ وہ تقریباً 40 افریقی ملکوں کو کووڈ-19 سے بچاؤ کی ویکسین فراہم کر رہا ہے۔ اس کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس کا یہ اقدام خالصتاً فلاحی مقصد کے لیے ہے۔

چین کی وزارت خارجہ کے ایک عہدے دار ووپنگ نے بیجنگ میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ ویکسین کی یہ خوراکیں عطیے کے طور پر دی جائیں گی یا ان کی امدادی قیمت رکھی جائے گی۔

چین کی وزات خارجہ کے ڈائریکٹر ووپنگ کا کہنا تھا کہ کچھ ملکوں نے اس وقت تک دوسرے ملکوں کو ویکسین نہیں دی،جب تک انہوں نے اپنے عوام کو ویکسین لگانے کا کام مکمل نہیں کر لیا۔

انہوں نے کہا کہ بلاشبہ ہمارے لیے بھی یہ یقینی بنانا ضروری تھا کہ ہم اپنے ملک کے عوام کو جتنی جلدی ممکن ہو ویکسین لگا دیں،لیکن اس کے ساتھ ساتھ ہم نے ضرورت مند ملکوں کو ویکسین فراہم کرنے کی اپنی بھرپورکوشش بھی کی ہے۔

چین کی وزارت خارجہ کے ڈائریکٹر وو پنگ افریقہ کو ویکسین کی فراہمی کے بارے میں نامہ نگاروں کو بتا رہے ہیں۔ 20 مئی 2021
چین کی وزارت خارجہ کے ڈائریکٹر وو پنگ افریقہ کو ویکسین کی فراہمی کے بارے میں نامہ نگاروں کو بتا رہے ہیں۔ 20 مئی 2021

ایک ایسے موقع پر جب کچھ حلقے امریکہ پر ویکسین ذخیرہ کرنے کا الزام لگا رہے ہیں، صدر جو بائیڈن نے پیر کے روز آئندہ چھ ہفتوں میں ویکسین کی دو کروڑ اضافی خوراکیں بیرونی ملکوں کو دینے کا وعدہ کیا۔ اس اعلان سے امریکہ کی جانب سے فراہم کی جانے والی ویکسین کی خوراکوں کی تعداد بڑھ کر آٹھ کروڑ ہو جائے گی۔

تاہم امریکی انتظامیہ نے اس بارے میں کچھ نہیں بتایا کہ یہ ویکسین کن ملکوں کو دی جائے گی۔

دو کروڑ اضافی خوراکیں، فائزر، موڈرونا یا جانسن اینڈ جانسن کے اسٹاک سے فراہم کی جائیں گی۔ اس سے قبل امریکی انتظامیہ نے جون کے اختتام تک ایسٹرازینیکا ویکسین کی تقریباً چھ کروڑ خوراکیں دینے کا وعدہ کیا تھا۔

امریکی صدر جو بائیڈن۔ فائل فوٹو
امریکی صدر جو بائیڈن۔ فائل فوٹو

بدھ کے روز اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے افریقی ملکوں کے لیے کرونا وائرس سے بچاؤ کی ویکسین کی دستیابی میں تیزی لانے کی اپیل کی تھی۔ سلامتی کونسل نے یہ کہتے ہوئے اپنی تشویش کا اظہار کیا تھا کہ اس براعظم کو باقی دنیا کے مقابلے میں محض دو فی صد ویکسین ملی ہے۔

سلامتی کونسل کے تمام 15 ارکان کی منظوری سے جاری ہونے والے بیان میں افریقی ملکوں کے لیے مناسب نرخوں پر کرونا وائرس سے بچاؤ کے لیے معیاری ٹیسٹ، علاج اور ویکسین کی فراہمی کی ضرورت پر زور دیا گیا۔

چین میں ویکسین بنانے والی چار لیبارٹریز نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ اس سال کے آخر تک کم ازکم دو ارب 60 کروڑ خوراکیں تیار کریں گی جس سے دنیا کی آبادی کے ایک بڑے حصے کو ویکسین لگائی جا سکے گی۔

چین نے مصر کو مقامی طور پر سینو ویک ویکسین بنانے کا لائسنس دے دیا ہے اور اسے ٹیکنیکی سہولت بھی مہیا کر رہا ہے جس سے وہاں جون میں ویکسین بننا شروع ہو جائے گی اور مصر کی ضروریات پوری ہو سکیں گی۔

ووپنگ کا کہنا تھا کہ صرف امداد سے افریقہ کے لیے ویکسین کے مسئلے کو حل نہیں کیا جا سکتا۔ ہمیں لازمی طور پر مقامی لیبارٹریوں کی مدد کرنی چاہیے تاکہ وہ اپنی ضرورت کی ویکسین خود تیار کر سکیں۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG